کورونا: وائرس جانوروں سے انسانوں میں کیسے منتقل ہوتا ہے؟ کورونا: وائرس جانوروں سے انسانوں میں کیسے منتقل ہوتا ہے؟
جانوروں کی ہر قسم میں انوکھے اور خطرناک وائرس پائے جاتے ہیں جو کہ اس خاص قسم کے جانور کو ہی عموماً متاثر کرتے... کورونا: وائرس جانوروں سے انسانوں میں کیسے منتقل ہوتا ہے؟

جانوروں کی ہر قسم میں انوکھے اور خطرناک وائرس پائے جاتے ہیں جو کہ اس خاص قسم کے جانور کو ہی عموماً متاثر کرتے ہیں مگر وقت کے ساتھ ساتھ ان میں سے کچھ وائرس انسانوں میں بھی منتقل ہوگئے جنہیں “زوناٹک وائرس” کہا جاتا ہے۔

جیسے جیسے انسانوں کی آبادی بڑھتی گئی تو انسان ویرانوں کو آباد کرتا گیا جس کی وجہ سے اس کا جانوروں کے ساتھ رابطہ بھی بڑھ گیا جوکہ عموماً نہیں ہوتا۔

وائرس جانوروں سے انسانوں میں بالکل اسی طرح منتقل ہو سکتے ہیں جس طرح وہ ایک انسان سے دوسرے انسان میں منتقل ہوتی ہےیعنی رطوبتوں، خون، فضلے یا پیشاب کے ذریعے جانوروں سے انسانوں میں منتقل ہوتے ہیں۔

وائرس جاندار نہیں ہوتے

یہ حقیقت ہے کہ وائرس زندہ نہیں ہوتے اس لیے انہیں پھیلنے کے لیے زندہ خلیوں کو تلاش ہوتی ہے جن سے چمٹ کر یہ ان کے اندر داخل ہوتے ہیں جہاں سے یہ مزید پھیلتے ہیں۔

چونکہ ہر وائرس ایک خاص قسم کے جانورکو ہدف بناتا ہے اس لیے ایک وائرس کا ایک قسم کے جاندار سے دوسری قسم میں منتقل ہونا غیرمعمولی ہے کیونکہ اس کے لیے انہیں ایک ارتقائی عمل سے گزرنا پڑتا ہے۔

اگر کبھی اتفاق سے ایسا ہوتا ہے تو اس کے لیے انسانوں کو وائرس کے ساتھ وسیع پیمانے پر رابطے کی ضرورت ہوتی ہے۔

عام طور پر وائرس کسی نئے میزبان میں رہنے کے لیے تیاربھی نہیں ہوتے اس لیے یہ آسانی سے پھیلتے ہیں نہیں ہے لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ وائرس اپنے اندر ایسی تبدیلیاں لاتے ہیں جن سے یہ پھیل سکیں۔

اور جب کوئی وائرس کسی نئی قسم کے میزبان میں منتقل ہوتے ہیں تو یہ عمل “زوناسس” کہلاتا ہے اور عموماً انسانوں میں انتہائی سنگین بیماری پیدا کرتا ہے۔ یہ اس لیے ہوتا ہے کیونکہ کسی بھی وائرس کا سب سے پہلا میزبان جاندار اور وائرس ایک ساتھ اپنے اندر تبدیلیاں لاتے ہیں لیکن جب وائرس کسی نئے میزبان میں منتقل ہوتا ہے تو اس میں اس وائرس سے نمٹنے کی صلاحیت موجود نہیں ہوتی ہے۔

مثلاً اگر ہم چمگادڑوں اور ان کے وائرسز سے رابطے میں آتے ہیں تو ہمیں ریبیز اور ایبولا وائرس کی بیماریاں لگ سکتی ہیں مگر چمگادڑیں بذات خود ان سے متاثر نہیں ہوتیں۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ حال ہی میں سامنے آنے والے تین کورونا وائرس سارس کوو(2003)،مرس کوو (2012) اوراس وقت عالمی وبا کی شکل اختیار کرنے والا سارس کوو 2 یا کو وڈ 19بھی چمگادڑوں سے ہی پھیلے۔

سائنسدانوں کے مطابق یہ تینوں وائرس چمگادڑوں سے کسی دوسرے جانور (ممکنہ طور پر پینگولن یا سانپ وغیرہ) اور پھر ان سے انسانوں میں منتقل ہوئے مگر اس حوالے سے ابھی مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔

alphanew