‘دوسروں کو شوکاز دینے سے پہلے اُس شوکازکا جواب دو جو قوم نے آپ کو دیاہے’
مسلم لیگ ن کی رہنما مریم نواز  نے وزیراعظم عمران خان  کا نام لیے بغیر انہیں مخاطب کرتے ہوئےکہا ہےکہ  دوسروں کو شوکاز دینے... ‘دوسروں کو شوکاز دینے سے پہلے اُس شوکازکا جواب دو جو قوم نے آپ کو دیاہے’

مسلم لیگ ن کی رہنما مریم نواز  نے وزیراعظم عمران خان  کا نام لیے بغیر انہیں مخاطب کرتے ہوئےکہا ہےکہ  دوسروں کو شوکاز دینے سے پہلے اُس شوکاز کا جواب دو جو قوم نے آپ کو دیا ہے۔

ٹوئٹر پر اپنے بیان میں مریم نواز کا کہنا تھا کہ آپ نے پورے پاکستان کو غربت، مہنگائی اور بدامنی میں دھکیل دیا ہے،  بے روزگاری اور بدامنی میں دھکیل کر اپنی جماعت کے کس رکن کو اس قابل چھوڑا ہے کہ وہ عوام کا سامنا کرے؟ آپ ایک بوجھ ہیں جو اب کوئی نہیں اٹھا سکتا۔

 مریم نواز کا کہنا تھا کہ عوامی نمائندوں کے سامنے دو راستے ہیں، پہلا یہ کہ عوام کے ساتھ کھڑے ہوجائیں، دوسرا یہ کہ آپ کی ڈوبتی کشتی میں غرق ہو کر رسوائی اور بدنامی کی تاریخ کا حصہ بن جائیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر بقول آپ کے 14 اراکان آپ کا ساتھ چھوڑ گئے ہیں اور آپ نے انہیں شوکاز نوٹس جاری کردیے ہیں تو اس کا مطلب یہ ہےکہ 342 کے ایوان میں165ارکان آپ کے ساتھ رہ گئےہیں، گویا آپ اکثریت کھو چکے ہیں ، آپ وزیراعظم کے منصب کا اخلاقی،  قانونی اور  آئینی جواز کھو چکے ہیں، اب اقتدار سےچپکے رہنےکا کوئی فائدہ نہیں۔

خیال رہے کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے 13 ارکان قومی اسمبلی کو اظہارِ وجوہ کے نوٹسز جاری کردیے ہیں۔

نوٹس  میں کہا گیا ہےکہ ذرائع ابلاغ  پرآپ کی جماعت سےعلیحدگی کی اطلاعات زیرِگردش ہیں اور اطلاعات کے مطابق آپ پی ٹی آئی پارلیمانی پارٹی سے علیحدہ ہوکر حزب اختلاف کاحصہ بن چکے ہیں، حزب اختلاف کی یہ جماعتیں وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک لاچکی ہیں۔

نوٹس میں کہا گیا ہےکہ آپ نے خود سے منسوب اطلاعات کی تردید کی نہ ہی کوئی وضاحت  سامنے آئی، دستور کی دفعہ 63 اے آپ کوجماعتی ہدایات پرعمل کرنےکا پابند  بناتا ہے، لہٰذا قومی اسمبلی میں پارلیمانی پارٹی کےسربراہ کےروبرو پیش ہو کر صفائی پیش کریں اور اظہارِ وجوہ کے نوٹس کا جواب دیں۔

اعلامیے کے مطابق رمیش کمار، وجیہہ قمر، سردار ریاض محمود مزاری، عامرطلال گوپانگ، باسط سلطان، عبدالغفاروٹو، افضل خان ڈھانڈلہ، رانا قاسم نون، احمد حسین دیہڑ، راجہ ریاض، نواب شیروسیر، نزہت پٹھان اورنورعالم خان کو اظہارِ وجوہ کا نوٹس جاری کیا گیا ہے۔

alphanew